محترمہ بینا گوئندی

وقارِ سخن میں خوش آمدید
…………………………………………………………………
ایک شام ایک شاعرہ
……………………………………………………….
شاعرہ کا نمائندہ شعر

جو دیدہ ور ہیں یہاں ان کے لیے شبنم ہوں
جو کم نگاہ ہیں ان کے لیے شرارہ ہوں

محترمہ بینا گوئندی
…………………………………………………………………
ایک شام ایک شاعرہ
…………………………………………………………………
تیری میری محبت کا یہ بھی اک حوالہ ھو
شعر میں وہ کہوں جو بہت ہی اعلا ھو
…………………………………………………………………
تم بھی محبوب نہیں عام سے اک شخص رھے
تم نے بھی صرف محبت میں کاروبار کیا
…………………………………………………………………
ھمیں نہیں اعتبار خود پہ
ھمارا کچھ اعتبار رکھنا
…………………………………………………………………
کوئ خوشی نہیں تو غم ہی نیا دومجھکو
بینائ دی ھےتو منظر بھی نیا دو مجھکو
…………………………………………………………………
اانسان ھوں یہ کافی نہیں تیرے لیۓ
لایا ہےکس لیۓمیرا شجرہ نکال کہ

نہ بدلا اس کا آسماں نہ بدلی ھے زمین
سو بار دیکھ، دل کا کا نقشہ نکال کہ

منزل پہ پہنچنے کی اگر جستجو رھی
پہنچیں گے کیسے دیکھنا راستہ نکال کہ

اس کی یہ خود پسند یاں لے ڈوبیں گی اسے
میں نے ھے سچ دکھایا شیشہ نکالُ کہ
…………………………………………………………………
کچھ رفعتیں تیری آرزو کے بعد
مرجھا گیں تیری گفتگو کے بعد
…………………………………………………………………
قدم دو قدم کا فاصلہ تھا
چاھے جانے اور ٹھکرانے میں
…………………………………………………………………
گھر کی ہر چیز مکمل ہے مگر میں ہی نہیں
چہرہ گلستاں اور بنجر ہے اندر کی زمیں
…………………………………………………………………
میرے ہونٹوں پہ بنا مسکراہٹ یوں مچلتی ہے
میں نے حسرتوں کو اپنے شعروں میں چھپایا ہے
…………………………………………………………………
اداسیوں کو اداس کر گئے ہو تم
پیار بے حساب کر گئے ہو تم
…………………………………………………………………
مٹی کا جو زرہ حالت ساکنان میں تھا
نظر کرم نے تیری آسےمجنوں بنا دیا
…………………………………………………………………
آرزو کے سنگ سنگ ملال بھی آیا
اعتکاف عشق میں تیرا خیال ہی آیا
…………………………………………………………………
محترمہ بینا گوئندی

وقارِ سخن میں خوش آمدید

FACEBOOK PAGE: www.facebook.com/waqaresukhan
WEBSITE LINK: www.mianwaqar.com/waqaresukhan