محترمہ تسنیم کوثر

وقارِ سخن میں خوش آمدید
—————————————–
ایک شام ایک شاعرہ
—————————————–
شاعرہ کا نمائندہ شعر
—————————————–
ہم لوگ تیرے شہر میں خوشبو کی طرح ہیں
محسوس تو ہوتے ہیں دیکھائی نہیں دیتے

محترمہ تسنیم کوثر

—————————————–
ایک شام ایک شاعرہ
—————————————–
آلائشوں سے پاک فضا کو ترس گئے
اپنے ہی گھر میں تازہ ہوا کو ترس گئے
—————————————–
پے کو دل لگی مہنگی پڑے گی
ہوا سے دوستی مہنگی پڑے گی
—————————————–
کیسے کیسے گمان میں گزری
زندگی امتحان میں گزری
—————————————–
اک تمنا کی تھی دل نے ساتھ تم ہر پل رہو
اس تمنا کی جو پائی تھیں سزائیں یاد ہیں
—————————————–
تلخئی وقت سے گبھرا کے بلاتے کس کو
یوں تو دنیا تھی مگر کوئی ہمارا کب تھا
—————————————–
ہم نے دیکھے ہیں بدلتے ہوئے دنیا کے چلن
کیسے انداز کی ہے کس کی نظر جانتے ہیں
—————————————–
معیار اپنا ہم نے گرا نہیں کبھی
جو گر گیا نظر سے وہ بھایا نہیں کبھی
—————————————–
ہم کو طوفاں میں گھرا دیکھ کے جاتے ہو سنو
یوں برے وقت میں آنکھیں نہیں پھیرا کرتے
—————————————–
پہلے رکھ دینا چراغوں کو سرِ راہ گزر
پھر کسی بھٹکے مسافر کی کہانی لکھنا
—————————————–
تم ساتھ نہ دے پاؤ گے یہ ہم کو خبر ہے
ہم پھر بھی وفاؤں کا بھرم رکھے ہوئے ہیں
—————————————–
پہلے ہم جلاتے ہیں شمعیں دل کے داغوں کی
پھر ہمیں شراروں کے ساتھ ساتھ چلتے ہیں
—————————————–
آسماں کے آنچل سے ٹوٹے جو ستارے ہیں
تم سے کیا کہیں جاناں خواب وہ ہمارے ہیں
—————————————–
ہوا سے لڑنے کا فن آیا جب سے
دیا طوفان ہوتا جا رہا ہے
—————————————–
یوں تو سب کچھ ہے مرے پاس مگر اس کے بنا
کتنی ویران ہے یہ دل کی حویلی میری
—————————————–
دل کی ہٹ دھرمی نے طوفان اُٹھا رکھا ہے
ناسمجھ اب بھی وہی ساتھ پرانا چاہے
—————————————
تھی شہر کی رونق میں تضح بھی ریا بھی
کب زیست کا نقشہ مرے گاؤں کی طرح تھا

محترمہ تسنیم کوثر
—————————————

وقارِ سخن میں خوش آمدید

FACEBOOK PAGE: www.facebook.com/waqaresukhan
WEBSITE LINK: www.mianwaqar.com/waqaresukhan