محترمہ رخشندہ نوید

وقارِ سخن میں خوش آمدید
—————————————–
وقارِ سخن میں خوش آمدید

ایک شام ایک شاعرہ
—————————————–
شاعرہ کا نمائندہ شعر
—————————————–

اپنے دل کے بوجھ کو بھاری نہیں ہونے دیا
میں نے خود پہ عمر کو طاری نہیں ہونے دیا

محترمہ رخشندہ نوید

—————————————–
ایک شام ایک شاعرہ
—————————————–
میں، ورنہ دشت کہاں پار کرنے والی تھی
یہ دشت پار کرایا شکاریوں نے مجھے
—————————————–
رخشندہ کو ہے عشق میں مرشد کی ہدایت
وہ ہجر کے کاجل سے پلک کالی کیے جائے
—————————————–
کہانیاں نہ ختم ہوں گی اختتامیوں کے ساتھ
مجھے قبول کر مری تمام خامیوں کے ساتھ
—————————————–
درودیوار سے جالا نہیں جاتا اماں
مجھ سے گھر بار سنبھالا نہیں جاتا اماں
—————————————–
کیوں مجھے چھوڑ کے جانے کو ہوئی ہے بیتاب
زندگی کیا میں تجھے اچھی نہیں لگتی ہوں
—————————————–
اس آنکھ میں آنسو ہے یہ پانی نہیں سمجھئے
تم میری محبت کو کہانی نہیں سمجھئے
—————————————–
کس طرح اس کے گلے لگ جائے رخشندہ نوید
خود مرے پتھر بدن کو درمیاں رکھا گیا
—————————————–
چند لمحوں کی مختصر قربت
اور یادیں شمار سے باہر
—————————————–
تیز بارش میں بہت بھیگی ہے میرے دل کی چھت
کچھ نمی آخر درو دیوار میں تو آئے گی
—————————————–
میرے مولا کو بھی تھا مطلوب پردہ ہی مرا
اس لیے رکھا گیا اس دل کو اندر کی طرف
—————————————–
کس طرح اس پہ ترے درد کا منظر کھلتا
تو محبت بھی تو کرتی تھی چھپا کر اس سے
—————————————–
اداسیوں سے اس قدر بھر پڑی ہے زندگی
معاف کیجئے دوست خوش مزاج چاہیے ہے بس
—————————————–
میں اس کی خامشی کو سن رہی تھی
وہ اظہار محبت کر رہا تھا
—————————————–
سرخ رنگت کسی عارض کی طرح پھیل گئی
تیری آواز کے چھوتے ہی مرے کانوں پر

آپ کا ہنسنا تو مشہور ہوا کرتا تھا
آپ رو پڑتی ہیں رخشندہ دکھی گانوں پر
—————————————–
میں پکڑتے پکٹرتے ڈوب گئی
مجھ سے کچھ گر گیا تھا پانی میں
—————————————–
اِک ایسے درد کی شدت سے گزری رخشندہ
خدا نے پچھلے گنہ سب معاف کر ڈالے
—————————————–
جو پنکھڑی کو کسی پنکھڑی سے وہ نسبت
جو رشتہ لب کا ہے لب سے، بہت عجب سا ہے
—————————————–
مرے مکاں کے برابر مکان کی دیوار
ہوئی جو نم تو اَدھر اینٹ اینٹ گیلی ہوئی
—————————————–
سڑک پہ دیکھا ہے ایک حادثے کو ہوتے ہوئے
کہیں کہیں سے مری جلد بھی ہے چھیلی ہوئی

محترمہ رخشندہ نوید
—————————————–

وقارِ سخن میں خوش آمدید

FACEBOOK PAGE: www.facebook.com/waqaresukhan
WEBSITE LINK: www.mianwaqar.com/waqaresukhan