محترمہ سعدیہ حریم

وقارِ سخن میں خوش آمدید
—————————————–
ایک شام ایک شاعرہ
…………………………………………………………
شاعرہ کا نمائندہ شعر

جو دوستی کے ہو خواہاں تو شکریہ لیکن
یہ استیں میں دکھاؤ تو کیا چھپا ہوا ہے

محترمہ سعدیہ حریم
…………………………………………………………
ایک شام ایک شاعرہ
…………………………………………………………
کیا سمندر پر گزر جاتی ہے طغیانی کے بعد
آج اپنی آنکھ بھر آئی تو اندازہ ہوا
…………………………………………………………
لوگ تنہا رہ کے بھی کس طرح جیتے ہیں حریم
ہم پہ گزری شام تنہائی تو اندازہ ہوا
…………………………………………………………
پاوں کی دھول منہہ کو آتی ہے
جانے کیسی ہوا چلی ہے آج
…………………………………………………………
دوسروں کو برا جو کہتے ہو
گھر میں کیا ائنہ نہیں ہوتا
…………………………………………………………
سیاہ تر ہیں جو قول و عمل میں اپنے حریم
انہیں بھی چاند میں دھبہ دکھائی دیتا ہے
…………………………………………………………
مرے سوال کا آخر وہ کچھ جواب تو دے
ہے دوست میرا تو دشمن سے کیوں ملا ہوا ہے
…………………………………………………………
جان چلی جائے مگر عزت دستار رہے
دل جھکے گر تو جھکے سر کو اٹھا رہنے دو
…………………………………………………………
شجر ہے بے ثمر لیکن نہ کاٹو
مجھے سایہ میسر ہو گیا ہے
…………………………………………………………
وہ چلا جائے نہ واپس مرے گھر تک آکر
بس اسی واسطے دروازہ کھلا رکھا ہے
…………………………………………………………
جب بھی آتی ہے تو لے جاتی ہے ساتھ اپنے اجل
جانے والے کا کوئی قصد سفر ہو کہ نہ ہو
…………………………………………………………
یوں نہ چل اتنی رعونت سے اٹھا کر گردن
کل نہ معلوم ترے تن پہ یہ سر ہو کہ نہ ہو
…………………………………………………………
یوں تو دکھ لفظ ہے چھوٹا سا مگر پھر بھی حریم
جب اٹھانا ہو تو اک بار گراں ہوتا ہے
…………………………………………………………
یہ دور ظلم و ستم کا یونہی رہا تو حریم
دلوں سے رحم کا احساس مر نہ جائے کہیں
…………………………………………………………
کچھ اندمال دخم رگ جاں نہ ہو سکا
خنجر بہ دست ہم کو سبھی چارہ گر ملے
…………………………………………………………
ہے خموشی بہت تمہاری طرف
تیر باقی نہیں کمان میں کیا
…………………………………………………………
نہ پوچھئے کہ کنارے پہ کیسے ڈوب گئے
بس اپنا ہاتھ بڑھایا تھا مہربان کی طرف
…………………………………………………………
منافقوں سے ہماری کبھی بنی ہی نہیں
سو فاصلہ ہی سدا درمیاں میں رکھتے ہیں
…………………………………………………………
تجھ کو جس ہاتھ نے جھک جھک کے سلامی دی تھی
آج وہ بھی تری دستار تک آ پہنچا ہے
…………………………………………………………
محبت کے بجائے نفرتون کے بیج ملتے تھے
وہی بوتے رہے تم بھی وہی بوتے رہے ہے ہم بھی
…………………………………………………………
بقا کی جنگ می کیا نفع کیا نقصان ہونا تھا
فنا ہوتے رہے تم بھی فنا ہوتے رہے ہم بھی

محترمہ سعدیہ حریم

…………………………………………………………

وقارِ سخن میں خوش آمدید

FACEBOOK PAGE: www.facebook.com/waqaresukhan
WEBSITE LINK: www.mianwaqar.com/waqaresukhan