ڈاکٹر شہناز مزمل

وقارِ سخن میں خوش آمدید
—————————————–
ایک شام ایک شاعرہ – تعارف
—————————————–
نام : (ڈاکٹر شہناز مزمل)
جائے پیدائش۔ فیصل آباد 10 اپریل
<تعلیم۔ایم اے لائبریری سائنس۔سائنٹفک مینجمینٹ(نیدرلینڈ)، ڈی ایچ ایم ایس (D.H.M.S)
—————————————–
تخلیقات: مطبوعہ شعری کتب
—————————————–
1۔ ابتداۓعشق
2۔ عشق تماشہ
3۔ عشق مسافت
4۔ عشقِ مسلسل
5۔ عشق دا دیوا
6۔عشق دا بھانبھڑ
7۔ عشقِ کل
8۔ انتہائے عشق
9۔ نورِ کل
10۔جادہء عرفاں
11۔ بعد تیرے
12۔ قرضِ وفا
13۔ میرے خواب ادھورے ہیں
14۔ موم کے سائبان
15۔ جراءتِ اظہار
16۔ جذب و حروف
17۔ پیامِ نو
18۔ شہناز مزمل کے منتخب اشعار
19۔ کھلتی کلیاں مہکتے پھول
20۔
Ten Poets of Today
21۔ قرآن پاک کا منظوم مفہو ترجمہ30واں پارہ عم یتساء لون
—————————————–
مطبوعہ نثری کتب
—————————————–
22۔ کتابیات اقبال
۔ کتابیات مقالہ جات23
24۔ لائبریریوں کا شہر لاہور
25۔ فروغِ مطالعہ کے بنیادی کردار
26۔ عکسِ خیال
27۔ دوستی کا سفر (سفر نامہ)
28۔ نماز (بچوں کے لیے)
—————————————–
زیرِطبع کتب
—————————————–
29۔ قرآن پاک کا منظوم مفہوم
30۔ کلیات شہناز مزمل(غزل)
31۔ کلیات شہناز مزمل (نظم)
32۔ کلیاتِ عشق
33۔ سفرِ عشق(سفر نامہ مکہ المکرمہ،مدینہ منور،ریاض)
34۔ اجلا کون میلا کون(کالموں کا مجموعہ)
35۔ بریف کیس۔ کہانیاں
—————————————–
شہناز مزمل پر لکھے جانے والے تحقیقی مقالہ جات
—————————————–
1۔ شہناز مزمل شخصیت اور فن (مقالہ ایم اے)
2۔ صدف رانی، بہاولپور یونیورسٹی
3۔ شہنازمزمل کی مذہبی شاعری (مقالہ ۔ایم اے)
4۔ مقدس ستار،اورینٹل کالج پنجاب یونیورسٹی
5۔ شہناز مزمل کے سفر نامے دوستی کے سفر کا تجزیاتی مطالعہ (مقالہ)
6۔ ثناء خاور، گورنمنٹ پوسٹ گریجویٹ کالج سمن آباد لاہور
7۔ شہناز مزمل کی اردو غزل اور نظم کا فکری و فنی مطالعہ (مقالہ ۔ایم فل)
8۔ حنا نعمان۔ مہناج یونیورسٹی لاہور
—————————————–
خطابات
—————————————–
1۔ مادرِدبستانِلاہور
2۔ بزمِ غالب پاکستان 10 اپریل 2014
3۔ دخترِپنجاب
4۔ لائف ٹائم اچیومنٹ ایوارڈ
5۔ عزیز نظامی ایوارڈ
6۔ الحبیب ادبی فورم پاکستان<گولڈ میڈل
7۔ پی ایل اے گولڈ میڈل
8۔ خواجہ فرید سنگت لاہور
بے شمار دیگر ایوارڈز جن کا احاطہ کرنا مشکل ہے
—————————————–
1987 سے ادبی اور ثقافتی تنظیم ادب سرائے انٹرنیشنل کی بانی و چئیر پرسن
—————————————–
چئیر پرسن قادری ویلفئیر فاؤنڈیشن
—————————————–
چئیر پرسن سلطان فاؤنڈیشن
—————————————–
پتہ125ایف ماڈل ٹاؤن لاہور
رابطہ نمبر 03004275692
ویب سائیٹس۔
www.shahnazmuzammil.com
www.adabsaraae.com
ای میل ایڈریس shahnazmuzamil@hotmail.com
—————————————–
ایک شام ایک شاعرہ
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

شاعرہ کا نمائندہ شعر:

کسی کی چنری میں دھوپ ٹانکی کسی کو وجہء جمال رکھا
کسی کے دامن میں صبح ٹانکی کسی کو شب کی مثال رکھا

ڈاکٹر شہناز مزمل
مادر۔دبستان ادب لاہور
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ایک شام ایک شاعرہ
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
رضا پہ تیری ہوئی میں راضی مگر مجھے آج یہ بتا
جواب سارے دیئے کسی کو مرے لئے کیوں سوال رکھا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کہیں پھول تھے کہیں تتلیاں کہیں زخم تھے کہیں بجلیاں
میں خمار میں تھی بہار کے میں ہر اک خزاں سے گزر گئی
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
فصل گل میں خوشبووں کی قید میں جکڑے رہے
پتھروں سے زخم تک کا فاصلہ کیسا رہا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اپنی اپنی ذات کی دہلیز پر سب رک گئے
مل کے لکھا فیصلہ لیکن ہوا کچھ بھی نہیں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ہٹا دو آئینے آنکھوں کی حیرانی نہیں جاتی
خود اپنی شکل بھی اب مجھ سے پہچانی نہیں جاتی
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
رابطہ استوار کیسے ہو
خوہشوں پر انا کا پہرہ ہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دم رخصت اسے جینے کی دعادی ہم نے
اور پھر آخری کشتی بھی جلا دی ہم نے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
میں خوف سے آگے کا سفر کیسے کروں گی
مت چھوڑ اکیلا یوں مجھے خواب دکھا کر
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
مجھے راستوں کی خبر نہ تھی اڑی خاک میرے وجود کی
میں تلاش کرتی ہوئی تجھے تیرے لامکاں سے گزر گئی
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کیوں آج تیرا شوق سفر کم نہیں ہوتا
ہر موسم گل عشق کا موسم نہیں ہوتا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
یہ ترا کرم ہے مرے خدا وہ نظر ہوئی ہے مجھے عطا
صفِ دوستاں میں چھپے ہوئے رُخِ دشمناں بھی دکھا دیے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
میں کھو گئی ہوں مگر اب گمان بولے گا
مکیں بغیر یہ خالی مکان بولے گا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
مسئلے نئے لے کہ نکل آتا ہے سورج
لوگ کہتے ہیں انہیں رات سے ڈر لگتا ہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
میری چاہتوں کو خراج دے مجھے کل نہیں آج دے
نہ کرے گی کوئی دوا اثر مرے زخم رسنے لگیں اگر
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کوئی آتا ہی نہیں ہے میرے غم خانے تک
دل کو بہلانے کو کیا شامِ غریباں کرتے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
بہت ٹھہراٶ سا محسوس ہوتا ہے طبیعت میں
اب آگے بڑھ کہ شہرِآرزو تسخیر کرنا ہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
درد ہے عشق کی معراج تو ڈرنا کیسا
آبلے پھوڑ کہ رفتارِ سفر دیکھتے ہیں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
وہ آسماں مزاج جراحت سرشت تھا
ہم دل کے آئینے کو بچاکر نکل گئے

ڈاکٹر شہناز مزمل
مادر۔دبستان ادب لاہور

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ایک شام ایک شاعرہ – عشق کل
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

عاشق کی زباں پر ہے ہر وقت ثنا کن کی
مشہود کو شاہد کو ملتی ہے ندا کن کی

کرلیتا ہے جب عاشق طےجادہ عرفاں کو
لا ہوت پہ جاکر ہی آتی ہے صدا کن کی
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
گم تھے ہم اپنی ذات کے اندر
اس نے خود ہی بنا لیا عاشق

عشق کی مے پلا کے ساقی نے
اپنے اندر چھپا لیا عاشق
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
عاشق نے تری عشق میں کیا کیا نہیں پایا
پہلے تو ترے عشق تماشے نے نچایا

کشکول فقیری کا لئے ہاتھ میں نکلی
اندر کے قلندر نے بہت شور مچایا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
تجھ کو ادھورے خواب کی تعبیر مل گئی
جلوہ گاہِ مراد میں اب رتجگے منا

یہ رمز۔عشق رمز ۔دعا رمز۔ زندگی
شہناز تیرے عشق۔مزمل کی ہے جزا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اپنا اندر ذرا اجال کے رکھ
عشق کے درد کو سنبھال کے رکھ

رقص۔بسمل جو تجھ میں جاری ہے
اے قلندر دھمال ڈال کے رکھ
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اک نور۔مجسم سے روشن دل۔مستانہ
ساقی نہ ہو محفل میں کیا رند کیا میخانہ

کیوں ہوش دلاتے ہو کیوں دنیا میں لاتے ہو
مد ہوش ہی اچھی ہوں دیکھوں رخ۔ جاناناں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ہم کو اس نے ہی پیار میں ڈالا
اور پھر اک قطار میں ڈالا

مے پلا کر بنا دیا مجنوں
پیار دے کر خمار میں ڈالا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
لمحہء وصل۔ یار آنے لگا
بن پئے ہی خمار آ نے لگا

کر لی جب ذات کی نفی ہم نے
جانے کیوں خود پہ پیار آ نے لگا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ہیں در ۔عشق پہ سجدے میں پڑے مدت سے
مے ملے گی تو یہ عشاق بھی گھر جائیں گے

پیر۔میخانہ ذرا یہ تو مجھے بتلا دے
در سے اٹھیں گے ترے ہم تو کدھر جائیں گے

ڈاکٹر شہناز مزمل
مادر۔دبستان ادب لاہور
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
وقارِ سخن میں خوش آمدید

FACEBOOK PAGE: www.facebook.com/waqaresukhan

WEBSITE LINK: www.mianwaqar.com/waqaresukhan