ڈاکٹر عارفہ صبح خان

وقارِ سخن میں خوش آمدید
—————————————–
ایک شام ایک شاعرہ
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
شاعرہ کا نمائندہ شعر

شعر کہ کر غبار اندر کا
میں ہمیشہ نکال لیتی ہوں

ڈاکٹر عارفہ صبح خان

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ایک شام ایک شاعرہ
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

میرے ہونٹوں سے چُرا کر وہ تبسم میرا
آنکھیں اشکوں سے بھی بھرنے نہیں دیتا مجھ کو

وہ کناروں پہ بھی آنے نہیں دیتا کشتی
اور غم کے دریا میں اُترنے نہیں دیتا مجھ کو
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
مکاں میرا ہے اور اس میں ہے دروازہ تمھارا
غلط نکلا ہے اس بارے میں اندازہ تمھارا

میں کب سے دیکھتی ہوں تیری صورت آئینے میں
سو ڈرتی ہوں بکھر جائے نہ شرازہ تمھارا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
خود میں خوشبو سمو کے دیکھیں گے
ہم کبھی پھول ہو کے دیکھیں گے

بوجھ ہلکا کریں گے سینے کا
ہم کبھی خود پہ رُو کے دیکھیں گے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ہوتے ہوتے ہوا ہے نا ممکن
دل سے اس شخص کا نکلنا بھی
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اس طرح تیری جدائی میں جہاں بکھرا ہے
سانس بکھری ہے کہیں دل کا نشاں بکھرا ہے

وہ جو اِک دیپ حوالا تھا اجالوں کا کبھی
گنبد ذات میں اب اُس کا دھواں بکھرا ہے

کارواں ہے کہ دکھائی نہیں دیتا مجھ کو
اور رستے میں کوئی کوہِ گراں بکھرا ہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کسی کلفت سفر کا مجھے غم ذرا نہ ہوتا
مرے ساتھ تم جو ہوتے مرے ساتھ کیا نہ ہوتا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ہمیں جس نے جرائتیں دیں وہ تمھارا ہی پیار تھا
سرِ بزم گفتگو کا ہمیں حوصلہ نہ ہوتا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
تیری خواہش تری تمنا میں
ایسے سینے کے داغ جلتے ہیں

جس طرح سر پھری ہواؤں میں
ڈرتے ڈرتے چراغ جلتے ہیں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ہم نے جو چاہا تھا وہ پایا نہیں
ارضِ دل پہ پھول اِک کھلتا نہیں

ڈاکٹر عارفہ صبح خان

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

وقارِ سخن میں خوش آمدید

FACEBOOK PAGE: www.facebook.com/waqaresukhan
WEBSITE LINK: www.mianwaqar.com/waqaresukhan